‘لفافہ ڈائن’ کی کہانی

حال ہی میں لانچ کیے جانے والے اسٹریمنگ پلیٹ فارم اردو فلکس کے سی ای او فرحان گوہر کا کہنا ہے کہ نئی ویب سیریز ’’لفافہ ڈائن‘‘ کو ڈیزائن کرتے وقت ایسے کئی صحافیوں کے چہرے سامنے تھے جو پیسے لے کر صحافت کرتے ہیں اور پھر کسی بھی حد تک چلے جاتے ہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کو دیے گئے انٹرویو میں فرحان گوہر کا کہنا تھا کہ ہم پورا دن نیوز چینل دیکھتے ہیں جہاں نیوز شوز پر لفافہ کا لفظ بہت زیادہ استعمال ہوتا ہے لہٰذا ہم نے سوچا کیوں نہ اس لفظ کو لے کر کوئی کہانی بنائے جائے یہی وجہ تھی کہ ہم نے لفافہ اور ڈائن کو ملاکر ایک کہانی بنائی ۔

فرحان گوہر کا کہنا تھا ہمارے میڈیا کے اندر کچھ ایسے چہرے ہیں جن سے متعلق کہا جاتا ہے کہ وہ لفافہ لیتے ہیں تاہم ویب سیریز لفافہ کا آئیڈیا کسی مخصوص صحافی کے بجائے پیسہ لے کر صحافت کرنے والے تمام صحافیوں کو ذہن میں رکھ کر ڈیزائن کیا گیا تھا لیکن جب کہانی ترتیب دی گئی تو بہت سارے چہرے موجود تھے جن کے خلاف اختلافات منظر عام آچکے ہیں۔

دوسری جانب ویب سیریز میں نیوز اینکر کا کردار اداکرنے والی اداکارہ مشل خان کاکہنا تھا کہ جب مجھے ہدایت کار کی طرف سے کال کی گئی تو میں کردار کو لے کر خاصی پرجوش تھی۔

مشعل کا مزید کہنا تھا کہ جب آپ بھی اس کردار کو دیکھیں گے تو آپ کو بھی اس پر ترس آئے گا کیونکہ یہ ایک بری انسان نہیں ہے بس یہ کہیں جاکر گم ہو گئی ہے۔خیال رہے کہ کہ ویب سیریز لفافہ ڈائن کو اب تک اردو فلکس پر نشر نہیں کیا گیا ہے۔