اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل میں پاکستان کا انتخاب اہم سفارتی کامیابی ہے، وزیر خارجہ

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل میں پاکستان کے دوبارہ انتخابات کو ایک ’اہم سفارتی کامیابی‘ قرار دیا۔

رپورٹ کے مطابق شاہ محمود قریشی نے اپنے بیان میں کہا کہ اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے انتخابات میں ہر ریجن سے پاکستان کوحمایت ملی ہے، بااثر اور بڑے ممالک نے بھی پاکستان کا ساتھ دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’یہ ووٹ انسانی حقوق کونسل میں ہماری 3 سالہ کارکردگی کو نمایاں کرتا ہے، پاکستان کے کردار کو دنیا قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے‘۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیرمیں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں بڑھ رہی ہیں اور ایسے میں پاکستان کا اس ادارے کا حصہ ہونا بہت اہم کامیابی ہے۔

منگل کی رات کو کیے گئے ایک ٹویٹ میں وزیر خارجہ نے کہا تھا کہ دوبارہ انتخاب ’قومی اور عالمی انسانی حقوق کے ایجنڈے کے پاکستان کے عزم پر عالمی برادری کے اعتماد کا مظہر ہیں‘ انہوں نے مزید کہا تھا کہ 2006 میں اس کونسل کے قیام کے بعد سے پاکستان پانچویں مرتبہ اس کونسل کے لیے منتخب ہوا ہے۔

وزیر اعظم کے دفتر نے اپنے بیان میں کہا کہ وہ دوبارہ انتخاب سے پاکستان پر عالمی برادری کے اعتماد کی عکاسی ہوتی ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ ’انتخاب میں شاندار کامیابی اقوام متحدہ میں پاکستان کے اصولی، قابل اعتماد اور ذمہ دار ہونے کی عکاسی کرتا ہے جو اقوام متحدہ میں بامقصد کردار ادا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے‘۔

کونسل کی 4 نشستوں کے لیے ایشیا پیسیفک خطے سے 5 امیدوار مد مقابل تھے جن میں سے پاکستان نے سب سے زیادہ ووٹ حاصل کیے۔
واضح رہے کہ پاکستان 2018 سے ایچ آر سی میں اپنی خدمات انجام دے رہا ہے جبکہ گزشتہ روز ہونے والے انتخاب میں پاکستان کو مزید 3 سال کے لیے رکن منتخب کرلیا گیا ہے، اس رکنیت کا آغاز یکم جنوری 2021 سے ہوگا۔

اس حوالے سے اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل مشن کی جانب سے جاری بیان میں کہا کہ عالمی برادری نے ایک بار پھر پاکستان پر اعتماد کا اظہار کیا اور انسانی حقوق کونسل میں اتفاق رائے پیدا کرنے کے لیے قومی اور عالمی انسانی حقوق کے ایجنڈے میں ہماری خدمات کو تسلیم کیا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ’پاکستان بنیادی حقوق اور اور آزادیوں کی حمایت کے فروغ کے ساتھ ساتھ ان کی حفاظت کے لیے پر عزم ہے‘۔