سندھ کابینہ نے جزائر سے متعلق آرڈیننس واپس لینے تک وفاق سے مذاکرات نہ کرنے کا فیصلہ کرلیا

کراچی: 100 کلوگرام گندم کے تھیلے کی قیمت 3 ہزار 687.50 روپے مقرر کرتے ہوئے سندھ کابینہ نے صدارتی آرڈیننس واپس نہ لینے تک کراچی کے ساحل سے جڑواں جزیروں کے معاملے پر وفاقی حکومت سے کوئی بات چیت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

وزیر اعلٰی سندھ سید مراد علی شاہ کی زیرصدارت کابینہ کے اجلاس کے آغاز میں بنڈل اور بڈو کے جڑواں جزیروں کے معاملے پر تبادلہ خیال ہوا۔ اس موقع پر تمام صوبائی وزراء، مشیران، چیف سیکریٹری ممتاز شاہ، ایڈووکیٹ جنرل سلمان طالب الدین اور متعلقہ سکریٹری موجود تھے۔

کابینہ کے ممبران نے ایک بار پھر وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ پاکستان آئی لینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی (پیڈا) کے قیام کے لیے پیش کردہ متنازع آرڈیننس کو واپس لے۔ کابینہ کے ارکان نے فیصلہ کیا کہ جب تک متنازع آرڈیننس واپس نہیں لیا جاتا تب تک وفاقی حکومت سے جزیروں پر کوئی بات چیت نہیں کی جائے گی۔ کابینہ نے اس آرڈیننس کو مقامی ماہی گیروں کے حقوق پامال کرنے، صوبائی حکومت کی اراضی پر قبضہ کرنے کی کوشش قرار دیا۔ کابینہ کے اراکین نے متفقہ طور پر کہا کہ ’ہم اس آرڈیننس کو قبول نہیں کریں گے کیونکہ یہ صوبائی خودمختاری اور مقامی لوگوں کے مفاد کے خلاف ہے‘۔