رمضان المبارک میں سستاترین سودا بیچنے والا ضلع خیبر کا رنجن سنگھ

ملک بھر میں مہنگائی کا طوفان ہونے کے باوجود ضلع خیبرکا رنجن سنگھ رمضان المبارک میں بلامنافع سودا بیچتا ہے۔ مادہ پرستی کے اس دورمیں ضلع خیبر میں سکھ برادری سے تعلق رکھنے والا تاجر رنجن سنگھ ہر سال ماہ رمضان میں منافع ترک کر دیتا ہے۔

رنجن سنگھ کا کہنا تھا کہ سال کے 11مہینے پیسے مگر رمضان اللہ کی رضاکمانے کا موقع ہے۔
رنجن کی دکان میں سستا ترین سامان فروخت ہوتے دیکھ کر ایک طرف گاہک حیران ہیں تو دوسری طرف جمرود بازار کے سارے دکاندار بھی پریشان ہیں۔

ضلع خیبرکےجمرود بازار میں قائم رنجن سنگھ کا قدیم کریانہ ا سٹور جہاں ہر سال رمضان کے تقدس کی خاطر اشیائے خور و نوش بغیر منافع کے فروخت کی جاتی ہیں۔ رمضان میں منافع ترک کرنے کی وجہ سے دکان کا کرایہ اور مزدوروں کی تنخواہیں رنجن سنگھ کو اپنی جیب سے ادا کرنا پڑتی ہیں جس پر خریدار رنجن سنگھ کی خدا ترسی کے معترف جبکہ دیگر تاجر پریشان ہیں۔

گراں فروشی کے عفریت میں ملوث تاجروں کے لیے رنجن سنگھ ایک قابل تقلید مثال ہے جس پر عمل کر کے ایک خوشحال معاشرے کی تشکیل ممکن بنائی جا سکتی ہے۔