تھر پارکر: محکمہ صحت کی ناکامی، زچگی کی سرکاری ڈسپنسریاں این جی او کے حوالے

محکمہ صحت سندھ نے تھرپارکرکے پسماندہ علاقوں میں زچگی کے لیے قائم سرکاری ڈسپینریاں چلانے میں ناکامی کے بعد انہیں غیرسرکاری تنظیم کے حوالے کردیا۔

ضلع تھرپارکر کے سرکاری اسپتالوں میں گزشتہ ایک سال کےدوران 21 ہزار سے زائد خواتین نے سرکاری اسپتالوں میں بچوں کو جنم دیا، اس تعداد میں تھر کے پسماندہ علاقوں کی وہ خواتین بھی شامل ہیں جو اپنی زندگی ہار کر نئی زندگی کو جنم دیتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں پاکستان: کورونا سے مزید 118 اموات، 5300 سے زائد کیسز رپورٹ

ذرائع کے مطابق تھر کے دور دراز پسماندہ علاقوں میں سرکاری اسپتال سرے سے موجود نہیں اور اگر کہیں ہیں تو فعال نہیں۔ محکمہ صحت نے طبی سہولت فراہم کرنے میں ناکامی کے بعد سرکاری ڈسپینسریاں ایک معاہدے کے تحت این جی او کے حوالے کردی جس کے نتائح محفوظ زچگی کی شکل میں آنے لگے۔