جہانگیر اور علی ترین کی ایف آئی اے میں پیشی کی اندرونی کہانی

تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین اور ان کے صاحبزادے علی ترین کی ایف آئی اے میں پیشی کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔ جہانگیر ترین اور علی ترین کی جانب سے ایف آئی اے کو دیے گئے جوابات کا پتہ لگالیا۔

ذرائع کے مطابق جہانگیر ترین اورعلی ترین نے وفاقی تحقیقاتی ادارے کو بتایاکہ بیرون ملک اثاثے ایف بی آر میں ظاہر ہیں، انہیں نہیں معلوم کہ فارمز کے بیچے گئے اثاثوں کی فہرست کہاں ہے۔ ذرائع کے مطابق جہانگیر ترین کا کہنا تھا کہ 4 ارب35کروڑ روپے کی قیمت مل ملازمین نے مقرر کی جب کہ علی ترین نے بتایاکہ ان 4 ارب35کروڑ روپے سے خاندان کے کمپنی کے ذِمے واجب الادا قرضے اتارےگئے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ جہانگیر ترین نے مختلف سوالات کے جواب میں بتایاکہ کوئی سرمایہ کار نہیں ملا لہٰذا ایم سی بی کے کہنے پر فاروقی پلپ میں سرمایہ کاری کی جس میں 3 ارب روپے کا نقصان ہوا۔ جہا نگیر ترین کا کہنا تھا کہ پبلک شیئر ہولڈرز سے کوئی حقیقت نہیں چھپائی۔ دوسری جانب ایف آئی اے ذرائع کا کہنا ہے کہ جہانگیر ترین اور علی ترین متعلقہ سوالات پر تفتیشی ٹیم کو مطمئن نہیں کر سکے۔