حکومت اور سرکاری ملازمین کے مذاکرات کامیاب لیکن دھرنا جاری

حکومت اور سرکاری ملازمین کے مذاکرات کامیاب ہو گئے لیکن دھرنا ختم نہ ہو سکا۔ گزشتہ روز اسلام آباد میں دن بھر پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں ہوتی رہیں، پولیس نے شیلنگ کی اور لاٹھیاں برسائیں، سڑکیں دھواں دھواں ہو گئیں، شیلنگ سے کئی افراد بے ہوش ہو گئے اور اس دوران مظاہرین پتھراؤ کرتے رہے۔

مشتعل مظاہرین نے وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز کو بھی شاہراہ دستور پر روک لیا تھا۔ اب اطلاعات ہیں کہ اسلام آباد میں دھرنا دیے سرکاری ملازمین اور حکومتی کمیٹی کے درمیان تین گھنٹے جاری رہنے والے مذاکرات کامیاب ہو گئے۔

یہ بھی پڑھیں کے سی آر کے سٹی اسٹیشن سے اورنگی ٹریک کے دوسرے مرحلے کا آغاز

رات گئے سرکاری ملازمین کے رہنما نے بتایا کہ حکومت نے گریڈ ایک سے 22 تک کے ملازمین کی تنخواہوں میں آئندہ بجٹ تک 20 فیصد عبوری اضافے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ حکومتی وفد میں وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید، وزیر دفاع پرویز خٹک اور وزیر مملکت علی محمد خان شامل تھے۔

سرکاری ملازمین کے رہنما نے بتایا کہ تمام گرفتار سرکاری ملازمین کو بھی رہا کیا جائے گا، صبح 11 بجے حکومتی کمیٹی کے ساتھ دوبارہ ملاقات ہو گی اور باقاعدہ اعلان دوپہر ڈھائی بجے نوٹیفکیشن کی صورت ہو گا، نوٹیفکیشن جاری ہونے تک دھرنا ختم نہیں کریں گے۔ مظاہرین نے ڈی چوک سمیت اسلام اباد کے کئی مقامات پر دھرنا دے رکھا ہے۔