‘استعفے دیناہےتو دیں،اسلام آباد مارچ کرنا چاہتے ہیں تو آئیں، 2 ماہ کا وقت نہ لیں’

وفاقی وزیرداخلہ شیخ رشیدکاکہنا ہےکہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) والوں کو استعفے دینا ہے تو دیں، اسلام آباد مارچ کرنا چاہتے ہیں تو آئیں، 2 ماہ کا وقت نہ لیں۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر داخلہ شیخ رشیدکا کہنا تھاکہ ہم مذاکرات کے دروازے بند نہیں کرنا چاہتے، این آر او اور قومی احتساب بیورو(نیب) کے سوا وزیراعظم بات چیت کرنےکےلیے تیار ہیں۔

وزیر داخلہ کاکہنا تھا کہ کل اہل لاہور نے ذمہ داری کا ثبوت دیا، اگر مولانا فضل الرحمان کے مدرسے کے طلبہ نہیں آتے تو ان کو بہت مایوسی ہوتی، میں نے کہا تھا کہ بیچ منجدہار میں اپوزیشن کی کشتی ڈوبے گی۔
شیخ رشیدکا کہنا تھاکہ عمران خان نے کہا ہے کہ وہ کسی صورت این آراو نہیں دے گا، ہم ڈائیلاگ ختم کرنا نہیں کرنا چاہتے، آپ جس سے چاہتے ہیں بتائیں ہم مذاکرات کرا دیتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ کل پی ڈی ایم نے لاہور میں اپنی سیاست کا جنازہ نکالا ہے، آئیں استعفے دیں میں آپ کا منتظر ہوں، 15یا 20 فروری کی لمبی تاریخ دی ہے،آئیں بڑے شوق سے استعفے دیں، لانگ مارچ کرنا چاہتے ہیں لانگ مارچ کریں، 2 ماہ کا وقت نہ لیں۔ انہوں نے کہا کہ نااہل سزا یافتہ اور مفرور افواج کے بارے میں غیرذمہ دارانہ گفتگو کرتے ہیں، 11 رہنماؤں میں سے سوائے بلاول بھٹو زرداری اور اختر مینگل کے کوئی منتخب نمائندہ نہیں،جو الیکشن ہار جاتے ہیں وہ نفسیاتی مسائل کا شکار ہو جاتے ہیں،عمران خان اپنی حکومت چھوڑ دے گا وہ این آر او نہیں دے گا۔