جب سیاستدان انتخابات کی شفافیت کو تسلیم نہیں کرتے تو پھر وہ الیکشن لڑتے کیوں ہیں ، ایس کے نیازی

الیکشن کے نام پر عوام کو ذلیل کیوں کیا جاتا ہے پارلیمانی نظام نہیں چلتا تو اسے کیوں چلایا جاتا ہے ، بڑے بڑے لیڈروں نے تمام انتخابات پر عدم اعتماد کا اظہار کیاہے عوام کو ن، میم ، ف ، ض سے کوئی سروکار نہیں ، انہیں بنیادی مسائل کا حل چاہئے ، اس وقت عوام پریشان ہیں ،مہنگائی عروج پر ہے ، اشیاء خوردو نوش میں بھی ملاوٹ ہی ملاوٹ ہےملک سیاسی حالات تسلی بخش نہیں ، اپوزیشن کو چاہئے کہ وہ تعمیر سیاست کرے اور مسائل کی نشاندی کرے ،تنقید برائے تنقید کے بجائے تنقید برائے تعمیر والی سیاست کرنی چاہئے

آج کچھ ہو رہا ہے یہ سب کچھ سیاسی لوگوں کا کیا دھرا ہے ، سیاستدان ہی نظام کو چلنے نہیں دیتے ، تینوں سیاسی پارٹیوں نے خرابیاں پیدا کررکھی ہیں ،روزنیو زکے پروگرام سچی بات میں گفتگواسلام آباد(روزنیوز رپورٹ)پاکستان گروپ آف نیوز پیپرز کے چیف ایڈیٹر اور روزنیوز کے چیئرمین ایس کے نیازی نے کہا ہے کہ بقول سیاسی جماعتوں کے الیکشن شفاف اور منصفانہ نہیں ہوتے تو پھر یہ انتخابات لڑتے ہی کیوں ہے ، عوام کو خوامخواہ ذلیل کیوں کیا جاتا ہے پارلیمانی نظام نہیں چلتا تو اسے کیوں چلایا جاتا ہے ،

بڑے بڑے لیڈروں نے تمام انتخابات پر عدم اعتماد کا اظہار کیاہے ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے روز نیوز کے پروگرام ’’سچی بات ‘‘ میں گفتگو کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ آج کچھ ہو رہا ہے یہ سب کچھ سیاسی لوگوں کا کیا دھرا ہے ، سیاستدان ہی نظام کو چلنے نہیں دیتے ، تینوں سیاسی پارٹیوں نے خرابیاں پیدا کررکھی ہیں ، اداروں کو خوامخواہ سیاست میں گھسیٹا جاتا ہے ، بلکہ میں یہ کہوں گا کا سیاست ہی تھرڈ کلاس کی جاتی ہے ، انہوں نے کہا کہ گزشتہ دنوں وزیر اعظم عمران خان جو تقریر کی میں اس کو بھی اچھا نہیں سمجھتا،

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ موٹروے کیس میں میڈیا کوریج کی جو پابندی عائد کی تھی اس حوالے سے میں ہائیکورٹ سے رجو ع کیا ورگرنہ یہ لوگ ملزم عابد ملہی کو گرفتا ہی نہ کرتے ، میرے عدالت میں جانے کی وجہ سے ملزم کی گرفتاری کی گئی، انہوں نے کہا کہ میں نواز شریف کے بارے میں بھی کوئی غلط سوچ نہیں رکھتا لیکن ہ میں حقیقت کو جاننا ہو گاکہ سیاسی لوگ فوج کی طرف دیکھتے ہی کیوں ہے ، اگر یہ کہتے ہیں کہ الیکشن شفاف نہیں تو پھر الیکشن لڑنے سے انکار کریں ،

آرمی چیف بہت بڑا آدمی ہوتا ہے اس کے پاس بہت بڑی فوج ہوتی ہے ، اسی سیاسیت سے کیا لینا دینا، لیکن یہ سیاست دان انہیں مجبور کرتے ہیں ان کے کان بھرتے ہیں پھر انہیں ملک کی خاطر کچھ نہ کچھ کرنا پڑتا ہے ، آج سیاستدان کہہ دیں کہ اگر فوج نے مداخلت کی تو ہم الیکشن نہیں لڑیں گے، انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ عوام کو ن، میم ، ف ، چ ، ھ، ض سے کوئی سروکار نہیں ، انہیں ان کے بنیادی مسائل کا حل چاہئے ، اس وقت عوام پریشان ہیں ، ایس کے نیازی نے کہا کہ پہلے یہ لوگ کسی بھی شخص کو خود سلیکٹ کرتے ہیں پھر اس میں خامیاں نکالتے ہیں در اصل یہ سیاست دانوں کا مینو فیکچرنگ پرابلم ہے ،

انہوں نے کہا کہ عمران خان ایک ایماندار آدمی ہے لیکن حکومت کی ڈلیور ی نظر نہیں آرہی اور آج اسی وجہ سے عوام سڑکوں پر ہے ، ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ جتنی ذخیر اندوزی اس حکومت میں ہوئی اور کسی میں نہیں ہوئی، حکومت اس جانب توجہ دے ، ایس کے نیازی نے مزید کہا کہ کرونا کی وجہ سے اللہ تعالیٰ کے کرم کی وجہ سے ہمارے ملک کو بہت کم نقصان پہنچا ہے ، ملک میں لوگ سرمایہ کاری کررہے ہیں ، عالمی سطح پر عمران خان کو ہی تسلیم کیا جاتا ہے ، ملک اندرونی حالات تسلی بخش نہیں آٹا، دوایاں ، اشیاء خوردو نوش مہنگی ہیں ، چیزوں میں ملاوٹ عام ہے ، اپوزیشن کو چاہئے کہ وہ تعمیر سیاست کرے اور مسائل کی نشاندی کرے ،