کچھ بھی ہوجائے اپوزیشن سے مفاہمت نہیں ہوگی، وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ کچھ بھی ہوجائے اپوزیشن سے مفاہمت نہیں ہوگی۔

نیوزکے مطابق وزیراعظم عمران خان سے سینیٹرفیصل جاوید اورذیشان خانزادہ نے ملاقات کی، اس ملاقات میں فلم اورڈرامہ انڈسٹری کے بحالی کیلئے مختلف اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ اس موقعے پراسلامی تاریخ پرمبنی فیچرفلمزاورڈرامے مقامی سطح پربنانے پرغورکیا گیا۔

ملاقات کے دوران وزیراعظم نے نوجوانوں کی مثبت اورتعمیراتی سرگرمیاں بڑھانے پربھی زوردیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ نوجوان تعمیری سرگرمیوں میں زیادہ سے زیادہ حصہ لیں، رواں ہفتے ٹائیگر فورس کے کنونشن میں نوجوانواں سے خطاب کریں گے۔
سینیٹرفیصل جاوید اورذیشان خانزادہ سے ملاقات کے دوران ملاقات میں سیاسی معاملات اوراپوزیشن کی حکومت مخالف تحریک پربھی گفتگو ہوئی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ انہوں نے اقتدارسنبھالنے کے پہلے دن ہی کہا تھا کہ لوٹ مارکرنے والے اکٹھے ہو جائیں گے، کچھ بھی ہو جائے اپوزیشن سے مفاہمت نہیں ہو گی۔ یہ جلسے کریں یا دھرنے دیں انہیں این آراونہیں دیا جائے گا۔

حکومتی ترجمانوں کے اجلاس سے خطاب

بعدازاں حکومتی ترجمانوں کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں خود ہی عوام کے سامنے بے نقاب ہوں گی۔ عوام کو معلوم ہے کہ ساری جماعتیں اپنے مفادات کے لیے اکٹھی ہوئیں ہیں۔ ہم نے اپنی پوری توجہ مہنگائی میں کمی اور معیشت کی بہتری پر مرکوز کر دی ہے، جلد صورتحال بہتر ہوگی۔مہنگائی کے خاتمےکےلئے اقدامات کئے جارہے ہیں، گندم اور چینی کی درآمد سے صورت حال بہتر ہوگی۔ مقامی سطح پر اشیائے خردونوش کی دستیابی کو یقینی بنانے کےلئے چھاپے مارے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا دھاندلی کی تحقیقات کیلئے ہم نے مخلصانہ پیشکش کی لیکن اپوزیشن کی جانب سے دھاندلی کے ثبوت ہی پیش نہیں کئے گئے،
اجلاس میں حکومتی ترجمانوں کو دی گئی بریفنگ میں بتایا گیا کہ مریم نواز نے این اے 120 کے ضمنی انتخاب پر ڈھائی ارب روپے خرچ کیے، قانون کے تحت یہ پیسہ خرچ نہیں ہو سکتا تھا، معاملہ نیب کو بھجوا رہے ہیں۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا شریف خاندان نے پنجاب حکومت کا خزانہ ذاتی مفادات کے لیے استعمال کیا۔