friend daughter sucking sideways big rod.videos porno
desi porn
pornoxxx

طالبان حکومت کیساتھ مل کر کام کرنے کے سواکوئی راستہ نہیں، عمران خان

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ افغان عوام کو خوراک کے بحران اور غذائی قلت کا سامنا ہے جس کی وجہ سے وہاں بہت بڑا انسانی المیہ جنم لے سکتا ہے۔ وزیراعظم نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ امریکا کو سمجھنا چاہیے کہ طالبان حکومت کو پسند نہ کرنا ایک چیز ہے لیکن یہ تقریباً 4کروڑ افغان عوام کی بقا کا سوال ہے۔

عمران خان نے کہا کہ افغانستان کی سردی بہت ظالم اور بے رحم ہے، اگلے چند ماہ کے حوالے سے افغان عوام کے لیے ہر کوئی فکر مند ہے، وہاں بہت بڑا انسانی المیہ جنم لے سکتا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ اسکے سوا کوئی راستہ نہیں کہ طالبان حکومت کے ساتھ مل کر کام کیا جائے اور ان سے انسانی حقوق بلخصوص خواتین کے حقوق اور شمولیتی حکومت کے مطالبات پر بات کی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ پابندیاں لگانے اور اکاؤنٹس منجمد کرنے سے انسانی المیہ جنم لے گا اور افغانستان افراتفری کا شکار ہوگا اور افغان پناہ گزینوں کا سیلاب آسکتا ہے، پاکستان میں پہلے ہی 30 لاکھ افغان پناہ گزین ہیں تاہم افغانستان میں امن دنیا اور پاکستان کے مفاد میں ہے ۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ امریکا کو ڈرون حملوں کی پالیسی پر نظر ثانی کرنا ہو گی ،دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان میں خود کش حملوں کا سیلاب آیا۔

وزیراعظم عمران خان نے انٹرویو میں مزید کہا ہے کہ کشمیر میں بھارتی مظالم جاری ہیں ،اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیر متنازع علاقہ ہے ، مگر عالمی برادری اس پر بات نہیں کر رہی۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں معصوم لوگوں کی نسل کشی کر رہاہے، مقبوضہ کشمیر پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک مسلمہ متنازعہ علاقہ ہے ،دنیا اس تنازعے کو تسلیم کرتی ہے۔

سنکیانگ کے حوالے سے سوال کے جواب میں وزیراعظم نے کہا کہ بھارت میں آر ایس ایس نظریے کی حکمرانی ہے ، مقبوضہ کشمیر اور سنکیانگ کے معاملے کا تقابلی جائزہ ہی سرے سے غلط ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے سنکیانگ کی صورت حال جاننے کیلئے اپنے سفیر معین الحق کو سنکیانگ بھیجا، ان کے مطابق صورتحال ویسی نہیں جیسی تصویر کشی مغربی میڈیا کر رہاہے۔

spanish flamenca dancer rides black cock.sex aunty
https://www.motphim.cc/
prmovies teen dildo wet blonde stunner does it on the hood of car.