مریم نواز پیشی پر اکیلی آئیں، لاہور ہائی کورٹ نے نیب کی درخواست مسترد کردی

لاہور: ہائی کورٹ نے مریم نواز کی نیب پیشی کے موقع پر کارکنوں کو ساتھ لانے کے خلاف نیب کی درخواست نمٹا دی ، عدالت نے ریمارکس دئیے کہ کوٸی قوانین کی خلاف ورزی کرے گا تو قانون اپنا راستہ اختیار کرے گا۔

لاہور ہائی کورٹ میں جسٹس سردار سرفرازڈوگر کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے نیب کی مریم نواز کیخلاف درخواست پر سماعت کی ۔

نیب پراسیکیوٹر نے دلاٸل دیے کہ مریم نواز کو نیب نے 26 مارچ کو دو کیسز میں طلب کر رکھا ہے ۔ مریم نے اعلان کیا کہ وہ سیاسی کارکنوں کا ہجوم ساتھ لے کر آٸیں گی ان کے بیانات بھی دھمکی آمیز ہیں، جس سے امن و امان خراب ہونے کا خدشہ ہے ۔ لہذا عدالت انھیں ایسا کرنے سے روکے ۔
یہ بھی پڑھیں: مریم نواز کی ضمانت قبل از گرفتاری پر حمزہ حیران ، لیگی رہنما ناراض

جسٹس سرفراز ڈوگر نے استفسار کیا کہ اس معاملے کو عدالت میں لانے کی کیا ضرورت ہے یہ تو ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ امن و امان کو یقینی بنائے ۔

فاضل جج نے کہا یہ سیاسی معاملہ ہے اس میں عدالت کو کیوں گھسیٹا جا رہا ہے ۔ ریاست کہأں ہے اگر کوئی قانون کی پاسداری نہیں کرے گا تو قانون اپنا راستہ بنائے گا۔

عدالت نے قرار دیا کہ آپ چاہے رینجرز بلو لیں ۔ کیا ریاست کو نہیں پتہ کہ کوٸی قانون توڑے تو کیا کرنا ہے ۔ امن و امان ریاست کی ذمہ داری ہے وہ اسے پورا کرے ۔

عدالت نے نیب کی درخواست نمٹاتے ہوٸے قرار دیا کہ ہر شخص کو قانون کی پاسداری کرنی چاہیے اگر کوٸی ایسا نہیں کرتا تو قانون اپنا رستہ اختیار کرے گی۔خیال رہے نیب نے عدالت میں درخواست کی تھی کہ مریم نواز پیشی پر اکیلی آئیں۔