بلاول، عمران خان پر تنقید سے پہلے اپنے گریبان میں جھانکیں، فیاض الحسن چوہان

لاہور: وزیرِ اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ بلاول زرداری، پی ٹی آئی اور عمران خان پر تنقید سے پہلے اپنے گریبان میں جھانکیں۔

فیاض الحسن چوہان نے چیئرمین پیپلز پارٹی کی پریس کانفرنس پر اپنے ردعمل میں کہا کہ بلاول ہمت کریں اور لاہور کے کسی ہسپتال میں جا کر کورونا وارڈز کا معائنہ کریں۔ اسامہ بن لادن کے نام پر سیاست کرنے والے بلاول زرداری شاید حقائق سے نابلد ہیں۔ طالبان کا قیام 1994ء میں بینظیر بھٹو کی وزارتِ عظمیٰ اور نصیر اللہ بابر کی وزارتِ داخلہ کے دور میں عمل میں لایا گیا۔ اس حقیقت کا فخریہ اعتراف نصیر اللہ بابر بارہا وزیرِ داخلہ کی حیثیت سے کر چکے ہیں۔

فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ بلاول زرداری ایک بدنام پارٹی کے ناکام لیڈر کے طور پر جانے جاتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ وزیراعظم عمران خان یوم کشمیر پر یکجہتی کا ماحول نہیں بنا سکے۔ انہیں پتا ہونا چاہیے کہ 1989ء میں ان کی والدہ نے راجیو گاندھی کو خوش کرنے کے لیے ان کے راستے سے کشمیر ہاؤس کے بورڈز ہٹوا دیئے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ کشمیر پر علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر جو کامیاب سفارتکاری وزیرِاعظم عمران خان نے کی، پہلے کسی نے نہیں کی۔ احتساب کے شکنجے میں پھنسے آصف زرداری کے سپوت شوگر کمیشن رپورٹ پر کاروائی کے بعد چھپتے پھر رہے ہیں۔

صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ اشاروں کنایوں میں این آر او کی باتیں کرنے والے بلاول زرداری سن لیں، کسی کرپٹ کو رعایت نہیں دی جائے گی۔ ساری دنیا میں پیپلز پارٹی کے دہشتگردوں، منشیات فروشوں اور کرپٹ عناصر کے ساتھ تعلقات کا چرچہ ہے۔