برطانوی حکومت نے 22 کرپٹ افراد پر پابندیاں عائد کر دیں

لندن: برطانوی حکومت نے 22 کرپٹ افراد پر پابندیاں عائد کر دیں۔ وزیر خارجہ ڈومینک راب نے کہا ہے کہ عالمی انسداد بدعنوانی اقدامات کے تحت بائیس کرپٹ افراد پر پابندیاں لگائی گئی ہیں۔

ڈومینک راب کے مطابق بدعنوان افراد کا تعلق روس، جنوبی افریقا، سوڈان، اور لاطینی امریکا سے ہے، یہ انٹرنیشنل کرپٹ افراد ہیں جن کے اثاثے بھی ضبط کر کے ان کے سفر پر پابندیاں عائد کر دی گئی ہیں۔برطانوی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ کرپٹ افراد میں 14 کا تعلق روس کے سب سے بڑے ٹیکس فراڈ سے ہے۔

انھوں نے کہا کرپشن غریب ممالک کی ترقی کی رفتار سست کر دیتی ہے، کرپشن سے غریب ممالک کا پیسا باہر نکلتا ہے اور غربت بڑھتی ہے، یہ جمہوریت کو بھی زہر آلود کر دیتی ہے۔

ڈومینک راب کا کہنا تھا کہ پابندی کے شکار افراد کرپشن کے انتہائی بد نما کیسز میں ملوث ہیں۔ واضح رہے کہ برطانیہ نے یہ پہلی بار بین الاقوامی کرپشن کے لیے کسی پر پابندی لگائی ہے۔

مجموعی طور پر 6 ممالک کے کرپٹ افراد پر پابندی عائد کی گئی ہے، جن میں 14 روسی ہیں جو ایک بڑے ٹیکس فراڈ میں ملوث تھے اور جنھیں ایک وکیل سرگی میگنسکی نے بے نقاب کیا تھا جو بعد ازاں دوران حراست مر گیا۔

3 تاجر بھائیوں اجے، اتل اور راجیش گپتا پر جنوبی افریقا میں سنگین کرپشن کا الزام ہے، سوڈان کا ایک بزنس مین اشرف سعید احمد حسین علی بھی ان میں شامل ہے جس نے جنوبی سوڈان کے ریاستی اثاثوں میں خردبرد کی، جب کہ 3 افراد کا تعلق لاطینی امریکا کے تین ممالک ہونڈراس، نکاراگوا اور گوئٹے مالا سے ہے۔