سوڈان سے ہرجانے کی رقم مل گئی، امریکی سیکریٹری خارجہ

واشنگٹن: امریکہ کے سیکریٹری خارجہ انتھونی بلینکن نے تصدیق کی ہے کہ سوڈان نے ماضی میں کیے جانے والے امریکہ مخالف حملوں میں جاں بحق ہونے والے افراد کے لواحقین اور زخمیوں کے لیے بطور ہرجانہ ساڑھے 33 کروڑ ڈالرز کی رقم ادا کردی ہے۔

سوڈان نے گذشتہ سال امریکہ کی دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والے ممالک کی فہرست سے اپنے نام کے اخراج کے لیے ہرجانے کے طور پر خطیر رقم ادا کرنے پر آمادگی ظاہر کی تھی۔ سوڈان کے مرکزی بینک نے رقم بھی امریکہ کو منتقل کردی تھی۔

سیکریٹری خارجہ انتھونی بلینکن نے مؤقر امریکی جریدے جرنل پائینر کے مطابق اپنے بیان میں کہا ہے کہ ہمیں امید ہے کہ معاوضے کی رقم سے متاثرین کے دکھوں اورالمیوں کا کچھ مداوا ہوسکے گا۔انہوں نے کہا کہ اس چیلنج والے عمل کے بعد امریکہ اور سوڈان ازسرنو دوطرفہ تعلقات کے نئے باب کا آغاز کرسکیں گے۔

انتھونی بلنکن نے کہا کہ ہم سوڈان سے دوطرفہ تعلق داری کو مزید وسعت دینے کے منتظر ہیں اور شہری قیادت میں عبوری حکومت کی سوڈانی عوام کو آزادی ، امن اور انصاف دلانے کے لیے کوششوں کی حمایت جاری رکھیں گے۔

امریکہ کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اکتوبر2020 میں سوڈان کا نام دہشت گردی کے سرپرست ممالک کی فہرست سے خارج کرنے کا اعلان کیا تھا۔ اعلان کردہ فہرست میں شمالی کوریا ،ایران اور شام کے نام بھی شامل ہیں۔

امریکہ نے 1993 میں سوڈان کے سابق صدر عمرحسن البشیر کے دورحکومت میں دہشت گردی کی سرپرستی کرنے والاملک قرار دیا تھا۔اس وقت عالمی میڈیا کے مطابق القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن سوڈان میں مقیم تھےاور وہ کئی سال تک برطرف صدرعمر حسن البشیر کے مہمان رہے تھے۔سابق ٹرمپ انتظامیہ کے آخری دنوں میں طے شدہ سمجھوتے کے تحت سوڈان عالمی بنک سے سالانہ ایک ارب ڈالر قرض وصول کرسکے گا۔

سوڈان اس طرح عالمی بنک سے تقریباً تین عشرے کے بعد رقم وصول کرے گا۔ہوگی۔ دستیاب اعداد و شمار کے مطابق اس وقت سوڈان پر 60 ارب ڈالرز کے غیرملکی قرضے واجب الادا ہیں۔