امریکا: کرونا وائرس کے حوالے سے نئی تحقیق میں دردناک انکشاف

امریکا کرونا وائرس سے شدید ترین متاثر ملکوں میں سے ایک ہے جہاں ایک سال میں لگ بھگ 3 کروڑ افراد وبا کی زد میں آئے، حال ہی میں ایک تحقیق سے علم ہوا کہ ہر پانچویں شخص نے اپنے کسی عزیز کو وبا میں کھو دیا۔

امریکا میں کرونا وائرس کی وبا کا ایک سال مکمل ہونے پر کی جانے والی ایک تحقیق سے پتا چلا ہے کہ ہر پانچویں امریکی شخص نے وبا میں اپنا کوئی نہ کوئی رشتہ دار یا انتہائی قریبی دوست کو موت کے منہ میں جاتے ہوئے دیکھا۔

یونیورسٹی آف شکاگو میں قائم سینٹر فار پبلک افیئرز ریسرچ کی جانب سے کی جانے والی تحقیق سے معلوم ہوا کہ وبا کے باعث امریکا میں ہر پانچویں شخص نے اپنا قریبی رشتہ دار یا قریبی دوست کھویا۔
یہ بھی پڑھیں: امریکا پولیس کے ہاتھوں قتل جارج فلائیڈ کے اہلخانہ نے تصفیہ کرلیا

ملک بھر میں کروائے گئے سروے سے معلوم ہوا کہ کرونا کے باعث سب سے زیادہ متاثر سیاہ فام کمیونٹی ہوئی تاہم وبا نے مجموعی طور پر پورے امریکا کو لپیٹ میں لیے رکھا اور تقریباً ہر خاندان کسی نہ کسی طرح متاثر ہوا۔

سروے کے مطابق کرونا میں سب سے زیادہ یعنی 30 فیصد ہلاکتیں سیاہ فام افراد کی ہوئیں جب کہ 29 فیصد لاطینی امریکی و ہسپانوی نسل کے افراد کی ہوئیں، اسی طرح سب سے کم ہلاکتیں یعنی 15 فیصد اموات سفید فام افراد کی ہوئیں۔

سروے میں یہ بات بھی نوٹ کی گئی کہ ماہانہ 30 ہزار امریکی ڈالر سے کم آمدنی والے افراد کی وبا کے باعث زیادہ اموات ہوئیں۔

یاد رہے کہ امریکا کرونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک میں سر فہرست رہا ہے، ایک سال میں امریکا میں کرونا وائرس سے لگ بھگ 3 کروڑ افراد متاثر ہوئے۔اس عرصے میں ملک میں 5 لاکھ 30 ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوچکی ہیں۔ فی الحال امریکا میں فعال کیسز کی تعداد 74 لاکھ سے زائد ہے۔