امارات کی جانب سے ویزے اور ورک پرمٹ بند ہونے پر حکومت کے غیر سنجیدہ رویے نے کئی سوال اٹھا دئیے

پاکستانی حکمران، پارلیمنٹ، کابینہ اور میڈیا اس مسئلے پر کوئی توجہ نہیں دے رہا، اس سے پاکستان کو اربوں ڈالر کانقصان ہو سکتا ہے، حکومت کو امارات سے سفارتی سطح پر بات کرنی چاہیے،امارات میں موجود پاکستانی ہماری اکانومی کی لائف امارات کی جانب سے ویزے اور ورک پرمٹ بند ہونے پر حکومت کے غیر سنجیدہ۔دُبئی معروف صحافی اور تجزیہ کار عامر متین نے متحدہ عرب امارات کی جانب سے پاکستانیوں کے لیے ویزہ اور ورک پرمٹ بند کرنے کے مسئلے پر حکومت پاکستان کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ ابھی تک ہماری حکومت کی جانب سے یو اے ای کے ایشو کو زیادہ اہمیت نہیں دی جا رہی ہے۔ اس مسئلے پر نہ تو پارلیمنٹ میں بات ہو رہی ہے نہ اس پر کابینہ کوئی بحث کر رہی ہے اور نہ ہی میڈیا ا س پر کوئی توجہ دے رہی ہے۔

بیرون ملک سے ملنے والی ترسیلات کا اپنی طاقت سمجھنے والی پاکستانی حکومت یو اے ای کی جانب سے ویزہ بندش پر خاموش ہے۔ پاکستانیوں پر متحدہ عرب امارات کی جانب سے ویزوں کی پابندی سے پاکستان کو اربوں ڈالرز کے نقصان کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔ وزارت خارجہ کی جانب سے بھی اس معاملے پر خاموشی ہی نظر آ رہی ہے۔وزارت خارجہ کی جانب سے ویزے کھلوانے کے لیے کوئی کوشش نہیں کی جا رہی ہے۔

حکومت کی جانب سے سفارتی سطح پر کوئی اقدامات نہیں کیے جا رہے۔ سینیئر تجزیہ کار کا مزید کہنا تھا کہ ہمارے یہاں کچھ ایسا مسئلہ بنا دیا گیا ہے کہ ہمارے یہاں کچھ حساس ایشو ز ہیں۔ سعودی عرب ، یو اے ای، ایران اور چین پر بات کرنے کو حساس موضوعات بنا دیا گیا ہے۔ حالانکہ اوور سیز پاکستانیز ہماری لائف لائن ہیں۔