چینی فوج ایسے ہتھیار سامنے لے آئی جنہیں دیکھ کربھارتی فوج میں خوف کی لہر دوڑ گئی

بیجنگ (نیوزڈیسک) لداخ بارڈر پر چینی فوج کے خطرناک ہتھیار ’’مائیکروویو پلس‘‘ سے بھارتی فوجیوں کے پسینے چھوٹ گئے۔ چین کی جانب سے نصب کیے گئے مائیکروویو پلس ہتھیار نے بھارتی فوجیوں کی حالت خراب کردی ہے جس کے بعد بھارتی فوجی خود ہی مورچے چھوڑ کر بھاگنے لگ گئے۔ میڈیارپورٹس کے مطابق چینی ماہر تعلیم نے دعویٰ کیا ہے کہ چینی افواج نے کوہ ہمالیہ کےدو پہاڑوں کو برقی مقناطیسی ہتھیار کے ذریعے مائیکروویو اوون میں تبدیل کردیا ہے جس کے بعد کئی بھارتی فوجی بیمار پڑ گئے ہیں۔

بیجنگ کی یونیورسٹی رن مین کے پروفیسر جن کان رونگ نے بتایا کہ چینی افواج نے دو پہاڑوں کو مقناطیسی ہتھیار کے ذریعے اس حد تک گرم کر دیا ہے کہ بھارتی فوجی قے کر کر کے بے حال ہو گئے اور ہمالیہ ریجن میں گرمی سے ان کا برا حال ہو گیا۔جس کے بعد کئی پوسٹوں سے بھارتی فوجی واپس چلے گئے اور چین نے لائن آف ایکچوئل کنٹرول پر ایک بھی گولی ضائع کیے بغیر پوسٹیں حاصل کر لیں۔غیر ملکی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق ایک لیکچر میں پروفیسر جن کان رونگ نے بتایا کہ پیپل لبریشن آرمی نے خوبصورتی سے ایک بھی فائر کیے بغیر بھارتی فوجیوں سے چیک پوسٹ خالی کروالی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ الیکٹرو میگنیٹک ہتھیار کی مدد سے انسانی جسم کے ٹشوز کو پکا دیا جاتا ہے جس کے بعد انسانی دماغ کی صلاحیت کمزور ہو جاتی ہے۔ چین کی جانب سے ہمالیہ کے دو پہاڑوں کو مائیکروویو اوون بنائے جانے کے بعد بھارتی فوجی قے کرتے رہے۔مائیکروویو ہتھیار پانی کے مالیکیولز کو گرم کرتا ہے اور جلد کے اندر موجود پانی بھی ابلنا شروع ہو جاتا ہے جس سے ناقابل برداشت اذیت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ مائیکروویو ہتھیار کی رینج آدھے میل کے فاصلے تک ہو تی ہے۔ رپورٹ کے مطابق چینی افواج یہ ہتھیار اگست کے آخر میں لداخ بارڈر پر لائی تھی ، جس کے بعد ایک شدید جھڑپ میں تقریباََ 20 بھارتی فوجی ہلاک ہوئے تھے۔ اس جھڑپ کے بعد چین پر الزام لگایا گیا تھا کہ اس نے نیوکلیئر ہتھیار بارڈر کے نزدیک لائے تھے ۔