عمان میں غیر قانونی طور پر داخل ہونے والوں کے لیے بری خبر

مسقط: 300 سے زائد اسمگلر اور درانداز غیر قانونی طور پر عمان میں داخل ہوتے ہوئے پکڑے گئے۔ 2020 کی تیسری سہ ماہی کے دوران کوسٹ گارڈ پولیس نے مختلف کارروائیوں میں مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے 322 اسمگلرز اور غیر قانونی طور پر داخل ہونے کی کوشش کرنے والوں کو گرفتار کیا۔عمانی پولیس کا کہنا تھا کہ دراندازی کرنے والوں کو عمانی سمندری حدود میں پکڑا گیا ہے۔

جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ کوسٹ گارڈ نے دیگر پولیس اداروں کے ساتھ مل کر سمندری راستے سے ہونے والی منشیات اسمگلنگ کے خلاف کامیاب آپریشن کیے۔
کوسٹ گارڈ پولیس کمانڈ کے ڈائریکٹر آپریشنز لیفٹیننٹ کرنل عبد العزیز الجبری کا کہنا تھا کہ کوسٹ گارڈ اہل کاروں کو عمانی سمندری حدود میں ایسے واقعات سے نمٹنے کے لیے مستقل طور پر تربیت دی جاتی ہے۔

انھوں نے کہا کہ کوسٹ گارڈ اہل کار مستقل طور پر اسمگلرز اور غیر قانونی تارکین وطن کا مقابلہ کرتے ہوئے اپنی جانیں بھی خطرے میں ڈالے رکھتے ہیں، بالخصوص رات کے مشکل ترین وقت میں جو خطرات اور چیلنجز سے بھرپور ہوتا ہے۔الجبری کا کہنا تھا کہ یہ کوسٹ گارڈ عملے کے تجربات ہیں جن کی وجہ سے وہ اسمگلنگ کرنے والی کشتیوں سے بخوبی نمٹ رہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ کرونا وبا کے دوران اسمگلرز سے نمٹنا اور بھی مشکل ہو گیا ہے، کیوں کہ غیر قانونی طور پر عمان میں داخل ہونے والوں کو وبا کے سلسلے میں حفاظتی اقدامات کی آگاہی نہیں ہوتی، تاہم پولیس کی کشتیوں کا عملہ ان کے ساتھ بالکل درست طریقہ کار پر عمل کرتے ہوئے نمٹتا ہے تاکہ وائرس کی منتقلی نہ ہو سکے۔
کرنل عبدالعزیز الجبری نے کہا کہ وائرس کی روک تھام کے سلسلے میں کوسٹ گارڈ پولیس کا وزارت صحت کے حکام سے بھی رابطہ رہتا ہے، تاکہ دراندازی کرنے والوں جب کرونا کی طبی جانچ کے لیے متعلقہ مراکز لایا جائے تو خصوصی طبی عملہ بھی ساتھ ہو۔انھوں نے رائل عمان پولیس کی جانب سے ان شہریوں کا شکریہ بھی ادا کیا جو سمندری حدود میں کسی مشتبہ شخص یا کشتی کے داخلے پر پولیس کو بروقت مطلع کر دیتے ہیں۔