کورونا دنیا میں کب تک موجود رہے گا؟ سائنسدانوں کی تازہ ترین تحقیق کے حیران کن نتائج

کورونا دنیا میں کب تک موجود رہے گا؟ سائنسدانوں کی تازہ ترین تحقیق کے حیران کن نتائج سے صحتیاب ہونے والے بھی اس بیماری سے مستقبل میں محفوظ نہیں ہیں۔
انسانی جسم میں کوویڈ-19 سے لڑنے کی قوت مدافعت ایک معمہ بنی ہوئی ہے، کیونکہ پیتھجن سارس کوو 2 کو بھی سائنس نے ایک سال قبل ہی جانا ہے۔واضح رہے کہ ماضی میں سائنسدانوں نے کہا تھا کہ یہ وائرس ہمارے درمیان دہائیوں تک رہے گا، جیسے نزلہ اور زکام کی وجہ بننے والے دیگر وائرسز موجود ہیں۔سائنسدان اب تک یہ اندازہ نہیں لگا پائے ہیں کہ کورونا وائرس سے ایک شخص کا قوت مدافعت کا نظام کتنا لڑ سکتا ہے۔واضح رہے کہ عالمگیر وبا کورونا وائرس دنیا بھر میں 3 کروڑ 64 لاکھ سے زائد افراد کو متاثر کرچکا ہے جبکہ اس کے باعث 10 لاکھ 61 ہزار سے زائد افراد اپنی جان کی بازی ہار گئے۔
دنیا ایک مشکل دور کی طرف بڑھ رہی ہے، دنیا کا ہر دس میں سے ایک شخص کورونا وائرس سے متاثر ہوسکتا ہے، عالمی ادارہ صحت نے کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز سے متعلق ایک بار پھر خطرے کی گھنٹی بجادی۔عالمی ادارہ صحت کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایمرجنسی پروگرامز مائیک ریان کا کہنا ہے کہ جنوب مشرقی ایشیائی ممالک میں یورپ کی طرح کورونا کیسز میں مستقل اضافہ ہو رہا ہے۔انھوں نے کہا کہ افریقہ اور مغربی بحرالکاہل کے علاقوں میں صورتحال نسبتاً بہتر ہے۔تاہم دنیا کی آبادی کا بڑا حصہ اب بھی خطرے کی زد میں ہے اور دنیا کی آبادی کا دس فیصد حصہ اس وائرس سے متاثر ہو سکتا ہے۔انھوں نے کہا کہ کورونا وائرس کی وبا مستقل پھیل اور بڑھ رہی ہے، لیکن ہم اب بہت کچھ سیکھ چکے ہیں۔