خون جمنے کے ڈر سے کوروناویکسین نہ لگوانے والے شخص کے ساتھ کیا ہوا؟

امسٹرڈم: نیدرلینڈز میں خون جمنے کے ڈر سے کورونا ویکسین لگوانے سے انکار کرنے والا شخص عالمی وبا کا شکار ہوکر اسپتال میں داخل ہوگیا۔

ایسٹرازینیکا ویکسین کے استعمال سے کچھ لوگوں میں بلڈ کلاٹس(خون میں لوتھڑے بننا) کے کیسز رپورٹ ہوئے تھے جس کے باعث ڈچ شہری نے بھی ویکسین نہ لگوانے کا فیصلہ کیا لیکن بدقسمتی سے اب وہ خود بھی کورونا کا شکار ہوکر اسپتال میں داخل ہے۔

نیدرلینڈز کے ڈاکٹروں نے مذکورہ مریض کی کہانی میڈیا پر شیئر اس لیے کی تاکہ دیگر لوگ ویکسین کے حوالے سے اپنی ہچکچاہٹ کو دور کرسکیں اور ویکسینیشن کا حصہ بنیں۔

ماہرین نے مریض کے پھیپھڑوں کا اسکین بھی عوام کو دکھایا جس میں کورونا کی تباہ کاریاں واضح تھیں۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ آپ کو کووڈ سے ہونے والی تباہی کو شناخت کرنے کے لیے پھیپھڑوں کے ماہر ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ طبی ماہرین مسلسل لوگوں کو وضاحتیں پیش کررہے ہیں کہ ویکسین کتنی ضروری ہے۔
یہ بھی پڑھیں: جانسن اینڈ جانسن کووڈ ویکسین اور بلڈ کلاٹس کے درمیان ممکنہ تعلق دریافت

خیال رہے کہ گذشتہ روز بھی امریکی ملٹی نیشنل کمپنی جانسن اینڈ جانسن کی کرونا ویکسین کے استعمال سے خون میں لوتھڑے بننے کی شکایات ریکارڈ کی گئیں۔ امریکا نے اپریل کے شروع میں جانسن اینڈ جانسن کی سنگل ڈوز کووڈ ویکسین کا استعمال روک دیا تھا جس کی وجہ چند افراد میں بلڈ کلاٹس کے کیسز سامنے آنا تھا۔

یاد رہے کہ اس ویکسین کو استعمال کرنے والے 8 افراد میں بلڈ کلاٹس کے کیسز سامنے آئے جن کی عمریں 60 سال سے کم تھی اور بیشتر خواتین تھیں۔ ان سب میں بلڈ کلاٹس ویکسی نیشن کے 3 ہفتے کے اندر رپورٹ ہوئے۔