گاڑیوں کا دھواں، مردوں سے زیادہ خواتین کی صحت پر اثرانداز، تحقیق

گاڑیوں کا دھواں، مردوں سے زیادہ خواتین کی صحت پر اثرانداز، تحقیق

ایک تازہ تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ گاڑیوں سے نکلنے والا دھواں مردوں سے زیادہ خواتین کی صحت پر اثرانداز ہو سکتا ہے۔

یونیورسٹی آف مینیٹوبا میں کی گئی اس تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ڈیزل کے بخارات کے نتیجے میں ایسے پروٹینز کی سطح بلند ہوتی ہےجن کا تعلق دل کی بیماریوں سے ہوتا ہے۔

محققین نے اس تجربے کو مہینے میں تین مختلف موقعوں پر آزمایا جس میں ڈیزل کی تین مختلف مقدار رکھنے والا دھواں استعمال کیا گیا۔

اس کے بعد محققین نے مردوں اور خواتین کے خون کے اجزاء میں تبدیلیوں کا معائنہ کیا جن کا تعلق سوزش، انفیکشن اور دل کی بیماریوں سے تھا، نتیجتاً خواتین میں ان پروٹینز کی سطح میں مردوں کے مقابلے میں اضافہ پایا گیا جو شریانوں کو سخت کرتے ہیں۔

اور یہ نتیجہ خطرے کی علامت ہے کیونکہ اس طرح دل کے دورے یا فالج کے امکانات بڑھ جاتے ہیں، تاہم ابھی اس پر مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔

یونیورسٹی آف مینیٹوبا کی پروفیسر نیلوفر مُکھرجی، جو تحقیق کی شریک مصنفہ بھی ہیں، کے مطابق اگرچہ یہ ابتدائی نتائج ہیں، البتہ ان نتائج سے یہ انکشاف ہوتا ہے کہ ڈیزل دھوئیں کے خواتین پر مختلف اثرات پڑتے ہیں۔

مذکورہ تحقیق کے یہ نتائج بارسلونا میں منعقدہ یورپین ریسپائریٹری سوسائٹی انٹرنیشنل کانگریس میں سامنے رکھے گئے۔

اس تازہ تحقیق کے لیے 10 لوگوں، جن میں پانچ خواتین اور پانچ مرد شامل تھے، کا انتخاب کیا گیا جو سگریٹ نوشی سے پرہیز کرتے تھے، تجربے کے دوران انھیں چار گھنٹوں تک دھوئیں میں سانس لینے کا کہا گیا، تاہم اس سے پہلے وہ چار گھنٹے صاف شفاف ہوا میں بیٹھتے تھے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

متعلقہ خبریں