شہباز گل کے خلاف بغاوت پر اکسانے کا مقدمہ، 2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

شہباز گل کے خلاف بغاوت پر اکسانے کا مقدمہ، 2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شہباز گل کو بغاوت پر اکسانے پر اسلام آباد کی مقامی عدالت میں پیش کر دیا گیا، جہاں ان کا  2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کیا گیا۔

ڈاکٹر شہباز گِل کو ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹس اسلام آباد میں پیش کیا گیا، ڈیوٹی مجسٹریٹ عمر شبیر نے مقدمے کی سماعت کی، اسلام آباد پولیس کی جانب سے شہباز گِل کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی گئی، جبکہ شہباز گل کے وکیل فیصل چوہدری نے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی مخالفت کی۔

ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹس اسلام آباد نے آباد پولیس کی جانب سے شہباز گِل کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا پر پہلے فیصلہ محفوظ کر لیا، بعد ازاں 2 صفحات پر مشتمل تحریری حکمنامہ جاری کرتے ہوئے پی ٹی آئی رہنما کو دو روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔

عدالت کا کہنا تھا کہ ریکارڈ کے مطابق شہباز گل کے خلاف الزامات پر ریمانڈ ضروری ہے، شہباز گل کا  معائنہ اور ووکل ٹیسٹ کرایا جائے۔

شہباز گِل کی پیشی کے موقع پر ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹس اسلام آباد کے باہر سیکورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے اور اسلام آباد پولیس کی اضافی نفری تعینات کی گئی تھی۔

عدالت میں پیشی کے موقع پر پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شہباز گل نے کہا ہے کہ ادارے ہماری جان ہیں، میرے بیان میں کچھ ایسا نہیں تھا جس سے شرمندگی ہو۔

واضح رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کے رہنما و سابق وزیر اعظم عمران خان کے چیف آف سٹاف شہباز گل پر تھانہ کہسار میں اداروں کے خلاف مبینہ غداری سمیت سنگین نوعیت کے 10 مقدمات درج ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

متعلقہ خبریں