’کرک واقعہ ملک میں بین المذاہب ہم آہنگی کو نقصان پہنچانے کی سازش ہے‘

اسلام آباد: وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نورالحق قادری کا کہنا ہےکہ کرک میں مندر کو مسمار کرنے کا واقعہ پاکستان میں بین المذاہب ہم آہنگی کو نقصان پہنچانے کی سازش ہے۔ اپنے ایک بیان میں نور الحق قادری نے کہاکہ غیرمسلموں کی عبادت گاہوں کو نقصان پہنچانا اسلامی تعلیمات کے منافی ہے، آئین بھی غیرمسلم آبادی اور ان کی عبادت گاہوں کی حفاظت پر زور دیتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کرک میں کچھ لوگ ایک مندر کو گرانے کی سازش کررہے ہیں، اسلام اور آئین پاکستان غیر مسلم اقلیتوں کو مکمل مذہبی آزادی کی اجازت دیتے ہیں، اس معاملےکے پرامن حل کے لیے وزارت مذہبی امور علاقے کے مذہبی رہنماؤں سے رابطے میں ہے۔ وزیر مذہبی امور کا کہنا تھا کہ کرک کی ہندوکمیٹی کے مندر سے ملحقہ جگہ خرید کر توسیع کرنے پر آبادی مشتعل ہوئی تھی، کرک انتظامیہ ملوث افراد کو گرفتار کر رہی ہے لہٰذا مقامی ہندو بھی پرامن رہیں، صوبائی وزیراقلیتی امور وزیر زادہ،ایم پی اے روی کمارکے ذریعےمعاملات حل کررہےہیں۔

نور الحق قادری نے کہا کہ کسی کوبھی اقلیتوں کےمقدس مقامات اور عبادت گاہیں گرانےکی اجازت نہیں دی جائےگی، واقعہ پاکستان میں بین المذاہب ہم آہنگی کو نقصان پہنچانے کی سازش ہے۔