نظر کے چشمے اور کرونا وائرس کا کیا تعلق ہے؟ تحقیق میں اہم انکشاف

کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے چند عادات کو نہایت ضروری قرار دیا گیا ہے جیسے کہ بار بار ہاتھ دھونا، ماسک پہننا، چہرے اور آنکھوں کو نہ چھونا اور سماجی فاصلہ رکھنا ہے۔

اب حال ہی میں ہونے والی ایک تحقیق سے پتہ چلا کہ چشمے کا استعمال کرونا وائرس کے خطرے میں کمی کرسکتا ہے، ماہرین کا کہناہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی ایک بڑی وجہ ہاتھوں سے بار بار چہرے اور آنکھوں کو چھونا ہے۔

تحقیق میں کہا گیا کہ نظر کا چشمہ استعمال کرنے والے افراد صحت مند بینائی والے افراد کی نسبت اپنے چہرے کو کم چھوتے اور آنکھوں کو کم مسلتے یا ہاتھ لگاتے ہیں۔

اس تحقیق کے لیے 81 خواتین اور 223 مردوں کی عادات کا مشاہدہ کیا گیا۔

مشاہدے میں دیکھا گیا کہ زیر مشاہدہ افراد نے ایک گھنٹے میں غیر ارادی طور پر 23 مرتبہ اپنا چہرہ چھوا اور اسی دوران انہوں نے 3 مرتبہ اپنی آنکھوں کو بھی چھوا لیکن وہ لوگ جو چشمہ استعمال کر رہے تھے انہوں نے یہ عمل 2 سے 3 گنا کم کیا تھا۔

اس تحقیق کے نتائج کی ابھی تصدیق ہونا باقی ہے جس میں یہ بات ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ چشمہ استعمال کرنے والوں میں دوسرے افراد کی نسبت کووڈ 19 میں مبتلا ہونے کے 2 سے 3 فیصد امکانات کم ہوتے ہیں۔