صحت

نومولود کی صحت اور جسمانی نشوونما کے لیے ماں کے دودھ سے بہتر کوئی غذا اور نہیں ہے

نمونیا-کے-خلاف-ماں-کے-دودھ-سے-بہتر-کوئی-

نومولود کی صحت اور جسمانی نشوونما کے لیے ماں کے دودھ سے بہتر کوئی غذا اور ٹانک نہیں ہے۔

یہ بات پوسٹ گریجویٹ میڈیکل انسٹی ٹیوٹ کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر الفرید ظفر نے اتوار کو یہاں لاہور جنرل ہسپتال (ایل جی ایچ) میں نمونیا کے امراض کے حوالے سے منعقدہ سیمینار کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ مائیں اپنے شیر خوار بچوں کو کم از کم 6 ماہ تک اپنا دودھ پلائیں تاکہ ان میں قوت مدافعت پیدا ہو اور وہ موسمی اثرات، نمونیا، سانس کی بیماری، فلو اور سینے کے انفیکشن سے محفوظ رہ سکیں۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ڈبلیو ایچ او کے مطابق دنیا میں ہر سال 26 لاکھ بچے نمونیا کی وجہ سے جان کی بازی ہار جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نمونیا پھیپھڑوں اور نظام تنفس کی بیماری ہے جس سے پھیپھڑے متاثر ہوتے ہیں، مریض کو سانس لینے میں دشواری، تیز بخار، سینے میں انفیکشن، قے اور غنودگی محسوس ہوتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بھیڑ اور جھٹکے بھی نمونیا کی علامات میں شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نمونیہ کسی بھی عمر میں ہوسکتا ہے تاہم جسمانی طور پر کمزور افراد اور بچوں کو سردیوں کے موسم میں خصوصی احتیاط کرنی چاہیے تاکہ وہ اس بیماری سے محفوظ رہیں۔

پرنسپل پی جی ایم آئی نے کہا کہ حکومت نے ای پی آئی پروگرام میں نوزائیدہ بچوں کے لیے حفاظتی ٹیکوں کے کورس میں نمونیا کی ویکسین بھی شامل کی ہے، اس لیے والدین کو چاہیے کہ وہ اپنے نوزائیدہ بچوں کی حفاظت کے لیے حفاظتی ٹیکوں کا کورس ہر قیمت پر مکمل کریں۔ ایسا کرنا ضروری ہے تاکہ بچوں کو مدافعتی نظام کو مضبوط کرکے نمونیا جیسی متعدی بیماری سے بچایا جاسکے۔

انہوں نے مزید کہا کہ خاص طور پر سردیوں کے موسم میں نومولود بچوں کی صحت کی دیکھ بھال والدین کی سو فیصد ذمہ داری ہے اور انہیں احتیاطی تدابیر پر عمل کرنا یقینی بنانا چاہیے کیونکہ یہ معصوم بچے اپنے بستر پر اپنے پہلو بھی نہیں بدل سکتے۔ انہوں نے کہا کہ والدین کا فرض ہے کہ وہ ان کا مکمل خیال رکھیں کیونکہ ان کی معمولی سی غفلت اور حفاظتی ٹیکوں کا کورس مکمل کرنے میں ناکامی سے بچے نمونیا سمیت متعدد بیماریوں میں مبتلا ہو سکتے ہیں جو جان لیوا ثابت ہوتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہر سال لاکھوں بچے اپنی پہلی سالگرہ منانے سے پہلے ہی مر جاتے ہیں۔

پروفیسر فہیم افضل اور پروفیسر محمد شاہد نے کہا کہ پاکستان میں بچوں کی اکثریت بیماریوں، معاشی حالات اور دیگر وجوہات سے آگاہی نہ ہونے کی وجہ سے دیگر بنیادی ضروریات سے محروم ہے۔ انہوں نے کہا کہ وسائل کی کمی کے باعث کئی بچے سردیوں کے موسم میں صحت بخش خوراک سمیت بنیادی ضروریات سے محروم ہو جاتے ہیں اور ایسے بچوں کو نزلہ اور فلو آسانی سے ہو جاتا ہے جو ہر سال نمونیہ میں تبدیل ہو جاتا ہے جس کی وجہ سے ہزاروں بچے ایک سال کی عمر کو بھی نہیں پہنچ پاتے۔ سال اور وہ نمونیا کی وجہ سے مر جاتے ہیں۔ انہوں نے ماؤں سے اپیل کی کہ وہ اپنے بچوں کو بریسٹ فیڈنگ پر رکھیں اور بروقت حفاظتی ٹیکے لگوانا نہ بھولیں اور اپنے بچوں کو مٹی اور دھوئیں سے بچائیں۔

ڈاکٹر آفتاب انور، ڈاکٹر عبدالعزیز اور ڈاکٹر محمد مقصود نے کہا کہ والدین کے لیے ضروری ہے کہ وہ بچوں کی صحت خصوصاً سردیوں میں خصوصی توجہ دیں اور اپنے ذرائع کے مطابق بچوں کو بہتر خوراک، گرم مشروبات اور گرم کپڑے فراہم کریں۔ کہ وہ ٹھنڈی ہوا اور سرد موسم کو برداشت کر سکیں۔

بعد ازاں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر الفرید ظفر نے کہا کہ عمر رسیدہ افراد اور ذیابیطس، بلڈ پریشر، دمہ، امراض قلب اور دیگر امراض میں مبتلا افراد نمونیہ کا باآسانی شکار ہوتے ہیں۔

موسم میں غذا کا خاص خیال رکھنا چاہیے اور پروٹین کا استعمال بڑھانا چاہیے، انڈوں کا استعمال نہ صرف جسمانی طور پر بلکہ قوت مدافعت بڑھانے میں بھی مددگار ثابت ہوتا ہے اور یہ قوت مدافعت ان کے جسم کو بیماریوں سے بچانے میں معاون ثابت ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر آپ کو زکام یا بخار کے ساتھ سانس لینے میں دشواری محسوس ہوتی ہے تو آپ مستند معالج سے لازمی معائنہ کرائیں تاکہ مرض کو بڑھنے سے پہلے ہی مناسب علاج سے روکا جا سکے۔

اس کے ساتھ لوگوں میں احتیاطی تدابیر کے بارے میں آگاہی، پمفلٹس بھی تقسیم کیے گئے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے