friend daughter sucking sideways big rod.videos porno
desi porn
pornoxxx

پاکستان اسٹیل ملز سے 11 ایکڑ اراضی لیز پر لینے کی منظوری

اسلام آباد: سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز نے بالآخر پاکستان اسٹیل ملز سے 11 ایکڑ اراضی لیز پر حاصل کرنے کی منظوری دیدی ہے جو کہ گیس کی سپلائی کی مد میں وصول کی جائے گی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ کے بورڈ نے زمین 30 سال کیلیے لیز پر لینے کی منظوری دی تھی، 11 ایکڑ اراضی سی ٹی ایس بن قاسم کے قریب ہے، سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ اسے مستقبل کے آر ایل این جی انفراسٹرکچر کے قیام کیلیے استعمال کریگا،اس وقت دو کمپنیاں انرجس اور تبیر انرجی پاکستان میں دو نئے ایل این جی ٹرمینلز کے قیام پر کام کر رہی ہیں۔

ایس ایس جی سی ان دو ایل این جی ٹرمینلز کیلیے گیس پائپ لائن کا ٹائی ان پوائنٹ قائم کریگا، گیس یوٹیلیٹی نے یہ زمین پاکستان اسٹیل ملز سے لیز پر حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کی کل رقم 386 ملین روپے ہے، سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ زمین کی ادائیگی کو پی ایس ایم وصولیوں کے حوالے سے ایڈجسٹ کریگا، دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز اس زمین کو اپنے RLNG ٹائی انکی تنصیب کیلیے استعمال کریں گے۔

ذرائع نے بتایا کہ ایس ایس جی سی دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز سے اصل قیمت وصول کریگا، وزارت بحری دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز کے ساتھ کام کر رہی ہے، یہ ایس ایس جی سی پر ایس ایس جی سی سے زمین حاصل کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے تاکہ یہ دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز آپس میں ٹائی سیٹ کر سکیں، اس سے قبل ایس ایس جی سی دباؤ کیخلاف مزاحمت کر رہی تھی تاہم اس نے بعد میں دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز کے لیے زمین حاصل کرنے پر اتفاق کیا۔

اس وقت حکومت گیس کے بحران پر قابو پانے کیلیے دو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز کو پاکستان میں ٹرمینل لگانے کے لیے سہولت فراہم کرنے کیلیے کام کر رہی ہے، ملک میں اس وقت دو ایل این جی ٹرمینلز کام کر رہے ہیں جو اینگرو اور پی جی پی سی کی ملکیت ہیں، ان دونوں ایل این جی ٹرمینلز میں 1300 ایم ایم سی ایف ڈی ایل این جی کو سنبھالنے کی صلاحیت جمع ہے تاہم پی جی پی سی کی ملکیت والا دوسرا ایل این جی ٹرمینل پاکستان ایل این جی لمیٹڈ (پی ایل ایل) کے ذریعے مکمل طور پر استعمال نہیں کیا گیا تھا۔

صارفین نے ٹرمینل کو پوری صلاحیت کے ساتھ استعمال نہ کرنے کی وجہ سے صلاحیت کی ادائیگی کے لیے تقریباً 99 ملین ڈالر ادا کیے تھے، پی ایل ایل ایل این جی کی درآمدات پر اپنی اجارہ داری برقرار رکھنے کے لیے نجی شعبے کو پی جی پی سی ایل این جی ٹرمینل کی اضافی صلاحیت مختص کرنے کی مخالفت کر رہا ہے۔

کابینہ نے 27 اگست 2020 کو ہونے والے اپنے اجلاس میں ایل این جی کی درآمد کے لیے اضافی انتظامات کرتے ہوئے گیس کی قلت سے نمٹنے کا فیصلہ کیا تھا، اس نے نئے RLNG ٹرمینلز قائم کرنے کی اجازت دی، اس نے 19 اکتوبر 2020 کو گیس یوٹیلیٹیز ایس این جی پی ایل اور ایس ایس جی سی کو نئے ایل این جی ٹرمینل آپریٹرز میسرز انرجس اور تبیر انرجی کو سہولت فراہم کرنے کی ہدایت بھی کی تھی۔

بین وزارتی اجلاس 8اپریل 2021 کو ہوا جس کی مشترکہ صدارت وزیر بحری امور اور ایس اے پی ایم پیٹرولیم نے کی، اس نے فیصلہ کیا تھا کہ ایس ایس جی سی مطلوبہ زمین نئے ایل این جی ڈویلپرز کو دے گی۔

پاکستان اسٹیل ملز نے یہ بھی بتایا تھا کہ اس کے بورڈ آف ڈائریکٹرز نے M/s کو اضافی1 1 ایکڑ زمین 30 سال کے لیے لیز پر دینے کی منظوری دیدی ہے، ایس ایس جی سی کی انتظامیہ نے ہفتہ کو ہونے والے اجلاس میں بورڈ آف ڈائریکٹرز کو سی ٹی ایس بن قاسم سے ملحقہ اضافی 11 ایکڑ اراضی 30 سال کی لیز پر حاصل کرنے کی سفارش کی تھی۔

spanish flamenca dancer rides black cock.sex aunty
https://www.motphim.cc/
prmovies teen dildo wet blonde stunner does it on the hood of car.