پاکستان

ارشد شریف کو قریب سے گولی ماری گئی، پوسٹ مارٹم میں انکشاف

کینیا میں قتل کیے گئے پاکستانی صحافی ارشد شریف کو قریب سے گولی ماری گئی، کینیا میں کیے گئے پوسٹ مارٹم میں انکشاف ہوا ہے۔

اس سے قبل کینیا کی پولیس نے دعویٰ کیا تھا کہ ارشد شریف کو غلط شناخت کے معاملے میں گولی مار کر ہلاک کیا گیا۔

پولیس نے بتایا کہ شریف اپنے ڈرائیور کے ساتھ ماگادی ٹاؤن سے نیروبی کی طرف گاڑی چلا رہے تھے جب انہیں پولیس افسران کے ایک گروپ کے ذریعہ سڑک بلاک کرنے پر جھنڈی ماری گئی۔

جب وہ مبینہ طور پر روکنے میں ناکام رہے اور روڈ بلاک سے گزر گئے تو اس نے ایک مختصر تعاقب اور گولی باری کی جس سے شریف کی موت ہو گئی۔ ان کی گاڑی الٹ گئی اور ان کا ڈرائیور زخمی ہو گیا اور اسے ہسپتال لے جایا گیا۔

اب پوسٹ مارٹم رپورٹ، جس کی ایک کاپی سماء ٹی وی کے پاس دستیاب ہے، نے انکشاف کیا ہے کہ صحافی کو قریب سے دو گولیاں ماری گئیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ پہلی گولی ارشد کی کمر میں لگی اور اس کے سینے سے نکل گئی، جبکہ دوسری گولی ان کے سر میں لگی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قتل میں جدید ہتھیار استعمال کیا گیا۔

جمعہ کو کینیا کی حکومت نے سینئر صحافی کے بہیمانہ قتل کے اہم شواہد حکومت پاکستان کے حوالے کر دیے۔

اس بات کا انکشاف مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے واپس آنے والے ارکان کے قریبی ذرائع نے کیا جس نے نیروبی کا سفر کیا تھا۔

جے آئی ٹی نے دو گواہوں خرم اور وقار کے بیانات بھی قلمبند کیے جو ارشد شریف کے قریبی ساتھی تھے۔

جے آئی ٹی نے ابتدائی طور پر سفارش کی ہے کہ خرم اور وقار کو مزید تفتیش کے لیے پاکستان کے حوالے کیا جائے۔

جے آئی ٹی کے قریبی ذرائع نے بتایا کہ حکومت نے تحقیقات کے لیے ضروری سمجھا تو خرم اور وقار کو واپس لانے پر رضامندی ظاہر کر دی ہے۔

ذرائع نے مزید کہا کہ توقع ہے کہ جے آئی ٹی تین دن میں تفصیلی تحقیقاتی رپورٹ پیش کرے گی۔

Leave feedback about this

  • Quality
  • Price
  • Service

PROS

+
Add Field

CONS

+
Add Field
Choose Image